Posts

Showing posts from January, 2016

Apno k sitam ka hisaab kya rakhna

APNO K SITAM KA HISAAB KYA RAKHNA, JO BEET GAYA PAL USE YAAD KYA RAKHNA!
BAS YE SOCH KAR MUSKURATE HAIN, APNE GHAMO SE DUSRON KO UDAAS KYA RAKHNA ♥---------------------♥

Likhu kuch aaj yai waqt ka takaza hai dil mai

likhu kuch aaj ye waqt ka takaza hai dil mai dard abi taza hai gir pardty hai aansu
mere kagaz par lagata hai kalam me sayahi kam dard zyada hai. ♥----------------------♥

Kuch pal k lamhe ab k saal mai hai

kuch pal ke lamhe ab k saal mai hai, ham unke or wo mere khayal mai hai,
tanha the pehle ham beparwah thi zindagi, ab fikar lagi rahti hai wo kis haal mai hai. ♥------------------♥

Zaroori to nahe jine k leyai sahara ho

Zaruri to nahi, jine ke liye sahara ho, Zaruri to nahi, hum jinke hai who humara ho,
Kuch kashtiya dub bhi jaya karti hai, Zaruri to nahi, har kashti ka kinara ho. ♥------------------♥

Terai siwa koi mery jazbaat mai nahe

Tere Siwa Koi Mere Jazbaat Mai Nahi, Aankhon Mein Wo Nami Hai Jo Barsat Mai Nahi, 
Panai Ki Tujhe Koshish Bahut Ki Magar, Shayad Wo Lakeer Mere Hath Mein Nahi ♥-----------------♥

Har khushi mere pehlu me hai pir ye kami kaisai

har khushi mere pehlu me hai pir ye kami kaisi har su jashn ki kaifiyat fir is kone me ghami kaisi
is phalte foolte ped me ye kaisi dali murjhaii hai shayad mujhe aaj fir kisi bewafa ki yaad aai hai ♥-------------------♥

Un hone dekha aur aanso gir paray

Unho ne dekha aur aansu gir parey, bhari basant mein jaise phool bikhar padey!
dukh woh nahi ki unhone humai alvida kaha,  dukh to ye hain k uske baad wo khud ro pade!! ♥--------------------♥

Apno k sitam ka hisaab kya rakhna

APNO K SITAM KA HISAAB KYA RAKHNA, JO BEET GAYA PAL USE YAAD KYA RAKHNA!
BAS YE SOCH KAR MUSKURATE HAIN, APNE GHAMO SE DUSRON KO UDAAS KYA RAKHNA ♥-------------------------♥

Socha tha k hum tumhe toot ker chahengai

socha tha k hum tumhe toot ker chahenge! tumko chaha bhi aur tooty bhi bahut.
socha tha k hum khushbu banker rahenghe! hum mehnke bhi bahut aur bhikhe  bhi bahut ♥-----------------♥

Dheere dheere se ab tere pyaar ka dard kam howa

Dheere dheere se ab tere pyaar ka dard kam hua, Na tere aane ki khushi hui aur na jaane ka gam hua,
Jab log mujhse puchte hain hamari pyar ki dastaan, Main keh deta hun ki ek fasana tha jo ab khatm hua ♥-----------------♥

Ajeeb tarha se socha tha zindage k leyai

Ajeeb Tarah se Socha tha Zindagi k liye, Jeena Marna tha kisi ke Liye, 
Tanha chhod Gye to Yakeen Aaya, Koi kisi ka nhi hota Zindagi bhar k liye..!! ♥----------------------♥

Dil totta hai ankh bhar jati hai

Dil tutta hai aankh bhar jati hai, kuch pal ke liye jaise zindgi ruk jati hai,
pehle wada karte hai jindgi ban ke rehenge, Phir na jane kyon yeh zindgi sath chhod jati hai. ♥-----------------♥

Judai ke yeh lamhe kitnai ajeeb hai

Judai ke yeh lamhe kitne ajeeb hai Tu door ho ke bhi mere kareeb hai
Hum ek ho kar bhi anjaan hai ek dooje se Yeh kaise hamare naseeb hai ♥---------------------♥

Kya mohabbat kise ke bhi kabil nahe hai

Kya mohabbt kisi ke bhi kabil nahi hai Jo dil chahe kyu usse wo hasil nahi hai
Saans ab jeevan ko itni door layi hai Maut keh rahe hai wo teri manzil nahi hai. ♥-----------------♥

Dil ke zakhmo ki sifarish na howi

Dil ke zakhmo ki sifarish na hui, Hamari muskaan ki faramaish na hui.
Jise dekhne ko tarasti rahi aankhe  unhe humse milny ki khwahish na hui.. ♥----------------♥

Tanha rehna to sikh leya humny

Tanha Rehna To Sikh Liya Humne, Per Khush Na Kabhi Reh Payenge,
Teri Duri To Pir Bhi Seh Leta Hai Ye Dil Per Teri Mohabbat Ke Bin Na Jee Payenge ♥--------------------♥

Gile kaghaz hi tarha hai zindage apni

Gile kaghaz hi tarah hai zindagi apni, Koi jalata bhi nahi aur bahat bhi nahi,
Is kadar akele hai raahon mein dil ki, Koi satata bhi nahi aur manata bhi nahi ♥------------------------------------------♥

Nazar ne nazar se mulaqat kar li

Nazar ne nazar se mulaqat kar li, Rahe dono ek dam khamosh par phir bhi baat karli.
Kuch samay baad Mohabbat ki fiza ko tab jana jab khud ko akela paya, Aur tab mere in aankhon ne ro ro ke barsaat kar li. ♥-------------------------------------------♥

Chahat ke mehfil mai bulaya hai kise ne

Chahat ki mehfil main bulaya hai kisi ne, Khud bula ker phir sataya hai kisi ne,
Jab tak jali hai shama jalta raha parwana, Kiya is tarhan saath nibhaya hai kisi ne ♥---------------------------------♥

Yu to sadmo me hi hans leta tha mai

Yu to sadmo me bhi hans leta tha main, Aaj kyun bewajah rone laga hu main...
Barso se hatheliya khaali hi rahi meri Phir aaj kyun lagata hain ki sab khone laga hun main ♥------------------------♥

Mai to chiragh ho tere aashiyane ka

Main to chiragh hu tere aashiyane ka, Kabhi na kabhi to bujh jaunga,
Aaj shikayat hai tujhe mere ujaale se, Kal andhere me bohot yaad aaunga.. ♥---------------------------------------♥

Mai dil ka ameer mukaddar ka gharib tha

Main dil ka ameer mukaddar ka gharib tha., Mil k bicharna mai maira nasib tha,
Chaha k bhi kuch na kar sake hum, Ghar bhi jalta raha aur samandar bhi kareeb tha

Aansuo k girne ke aahat nahe hote

Aansuo ke girne ki aahat nahi hoti,  Dil ke tootne ki awaaz nahi hoti, 
Agar hota khuda ko ehsaas dard ka,  to use dard dene ki Aadat nahi hoti..

Zara si baat der tak rulati rahe

zara si baat der tak rulati rahi, khushi mein bhi aankhe aansu bahati rahi,
jise chaha woh mil kar bhi na mila.. zindagi humko bas u  hi aazmati rahi... ♥-----------------------------------------------♥

Raat dhal gayi sitare chale gaye

Raat dhal gayi,  sitare chale gaye.. Ghairo se kya gila  jab apne chale gaye..
Jeet to sakte thy  ishq ki bazi hum bhi.. Par unko jitane ke liye  hum harte chale gaye..

Dard is kadar bada ke ghabrake pee gaya

Dard is Kadar bhadha ki ghabra ke pee gaya, Apni bebasi per taras kha ke pee gaya,
Thukra raha tha ye jaha badi der se mujhe, Aaj is jaha ko thukra ke pee gaya..

Roye hai buhut tab zara karaar mila

Roye Hai Buhat Tab Zara Karaar Mila Hy, Is Jahan Mein kise Bhala sacha Pyar Mila Hy,
Guzar rahi hey zindagi Imtehan ke daur se, Ek khatam Howa To Dosra Tayar Mila He..

Nikalte hai jab tumhare aansu

Nikalte hain jab tumhare aansu,  Dil karta hai saari dunya jalla du,
Phir sochti hu ,honge tumhare bi apne,  Kahi tumhe phir se rula na du,
♥--------------------------------------------------------------------------------------------------♥

Allama Muhammad Iqbal History

Image
Allama Muhammad Iqbal


Sir Muhammad Iqbal (November 9, 1877 – April 21, 1938), also known as Allama Iqbal (علامہ اقبال), was a philosopher, poet and politician in British India who is widely regarded as having inspired the Pakistan Movement. He is considered one of the most important figures in Urdu literature, with literary work in both the Urdu and Persian languages.


Iqbal is admired as a prominent classical poet by Pakistani, Iranian, Indian and other international scholars of literature. Though Iqbal is best known as an eminent poet, he is also a highly acclaimed "Muslim philosophical thinker of modern times".
His first poetry book, Asrar-e-Khudi, appeared in the Persian language in 1915, and other books of poetry include Rumuz-i-Bekhudi, Payam-i-Mashriq and Zabur-i-Ajam. Amongst these his best known Urdu works are Bang-i-Dara, Bal-i-Jibril, Zarb-i Kalim and a part of Armughan-e-Hijaz. In Iran and Afghanistan, he is famous as Iqbāl-e Lāhorī (Iqbal of Lahore), and he is mo…

Faiz Ahmad Faiz

Image
Faiz Ahmad Faiz, (born 13 February 1911 – 20 November 1984) was an influential left-wing intellectual, revolutionary poet, and one of the most famous poets of the Urdu language from Pakistan. A notable member of the Progressive Writers' Movement (PWM), Faiz was an avowed Marxist. Listed four times for the Nobel Prize in poetry, he received the Lenin Peace Prize by the Soviet Union in 1962. Despite being repeatedly accused of atheism by the political and military establishment, Faiz's poetry suggested a more nuanced relationship with religion in general and with Islam in particular. He was, in fact, greatly inspired by South Asia's Sufi traditions.

Faiz was controversially named and linked by Prime minister Liaquat Ali Khan's government for hatching the conspiracy (see Rawalpindi conspiracy case) against Liaquat Ali Khan's government, along with a left-wing military sponsor Major-General Akbar Khan. Having been arrested by Military police, Faiz among others receive…

Nawaz Deobandi Ghazal tairy aanny ke jab

تیرے آنے کی جب خبر مہکے۔۔ نوازؔ دیوبندی
تیرے آنے کی جب خبر مہکے تیری خوشبو سے سارا گھر مہکے
شام مہکے تیرے تصور سے شام کے بعد پھر سحر مہکے
رات بھر سوچتا رہا تجھ کو ذہن و دل میرے رات بھر مہکے
یاد آئے تو دل منور ہو دید ہو جائے تو نظر مہکے
وہ گھڑی دو گھڑی جہاں بیٹھے وہ زمیں مہکے وہ شجر مہکے

Noshi Gilani Ghazal

نوشی ؔ گیلانی کی ایک غزل
محبت کی اسیری سے رہائی مانگتے رہنا بہت آساں نہیں ہوتا جدائی مانگتے رہنا
ذرا سا عشق کر لینا،ذرا سی آنکھ بھر لینا عوض اِس کے مگر ساری خدائی مانگتے رہنا
کبھی محروم ہونٹوں پر دعا کا حرف رکھ دینا کبھی وحشت میں اس کی نا رسائی مانگتے رہنا
وفاں کے تسلسل سے محبت روٹھ جاتی ہے کہانی میں ذرا سی بے وفائی مانگتے رہنا
عجب ہے وحشت ِ جاں بھی کہ عادت ہو گئی دل کی سکوتِ شام ِ غم سے ہم نوائی مانگتے رہنا
کبھی بچے کا ننھے ہاتھ پر تتلی کے پر رکھنا کبھی پھر اس کے رنگوں سے رہائی مانگتے رہنا

Tilok Chand mahroom ki ek ghazal

تلوک چند محرومؔ کی ایک پیاری غزل
نظر اٹھا دل ناداں یہ جستجو کیا ہے ؟ اسی کا جلوہ تو ہے اور روبرو کیا ہے ؟
کسی کی ایک نظر نے بتا دیا مجھ کو سرورِ بادہ بے ساغر و سبو کیا ہے
قفس عذاب سہی، بلبلِ اسیر ، مگر ذرا یہ سوچ کہ وہ دامِ رنگ و بو کیا ہے ؟
گدا نہیں ہے کہ دستِ سوال پھیلائیں کبھی نہ آپ نے پوچھا کہ آرزو کیا ہے؟
نہ میرے اشک میں شامل نہ ان کے دامن پر میں کیا بتاؤں انہیں ، خونں آرزو کیا ہے ؟
سخن ہو سمع خراشی تو خامشی بہتر اثر کرے نہ جو دل پر وہ گفتگو کیا ہے؟

Faiz Ahmad Faiz Ghazal roshan kahay bahar k

فیض احمد فیضؔ کی غزل
روشن کہیں بہار کے امکاں ہوئے تو ہیں گلشن میں چاک چند گریباں ہوئے تو ہیں
اب بھی خزاں کا راج ہے لیکن کہیں کہیں گوشے رہِ چمن میں غزل خواں ہوئے تو  ہیں
ٹھہری ہوئی ہے شب کی سیاہی وہیں مگر کچھ کچھ سحر کے رنگ پُر افشاں ہوئے تو ہیں
ان میں لُہو جلا ہو، ہمارا، کہ جان و دل محفل میں کچھ چراغِ فروزاں ہوئے تو ہیں
ہاں کج کر و کلاہ کہ سب کچھ لُٹا کے ہم اب بے نیازِ گردشِ دوراں ہوئے تو ہیں
اہلِ قفس کی صبح چمن میں کھلے گی آنکھ بادِ صبا سے وعدہ و پیماں ہوئے تو ہیں
ہے دشت اب بھی دشت مگر خون پا سے فیضؔ سیراب چند خارِ مغیلاں ہوئے تو ہیں

Ahmed Nadeem Qasmi Ki Bahtreen ghazal

احمد ندیمؔ قاسمی کی ایک پیاری غزل
مجھے دکھ یہ ہےکہ بہار میں بھی طیور بے پر و بال ہیں میرے ہمسفر ! نہ ملول ہو، یہ ملال میرے ملال ہے
میری بے کلی سے خفا نہ ہو، میری جستجو کا بھرم نہ کھو تجھے اک جواب وبال ہے، میرے لب پہ لاکھ سوال ہیں
وہ تھی اک لکیر سی آبجو،یہ ہے، چار سو کی فضائے ہو وہ گھڑی تھی تیرے وصال کی، یہ فراق کے مہ و سال ہیں
یہ عجیب حسن قیاس ہے، کہ جو دور ہے وہی پاس ہے یہ تصورات کے واہمے، میرے دشتِ غم کے غزال ہیں
یہ جو عرصہ گاہِ خیال ہے، تیرا فن ہے تیرا جمال ہے میرے شعر ہوں کہ ادب میرا، یہ سبھی تیرے خد و خال ہے
یہ عجب طرح کا تضاد ہے ، یہ دل و نظر کا فساد ہے میرے تجربے ہیں کمال پر ، میرے درد رو بہ زوال ہیں

Sultaan Muhammad Qale Qtub Shah Ghazal

اردو کے پہلے صاحب دیوان شاعرسلطان محمد قلی قطبؔ شاہ کی غزل(دکنی اردو میں)
سب اختیار میرا تج ہات ہے پیارا جس حال سوں رکھے گا ہے او خوشی ہمارا
نیناں انجھوں سوں دھوئوں پگ اپ پلک سوں جھاڑوں جے کوئی خبر سولیاوے مکھ پھولوں کا تمہارا بتخانہ نین تیرے ہو ربت نین کیا پتلیاں مجھ نین ہیں پوجاری پوجا ادھان ہمارا اس پتلیاں کی صورت کئی خواب میں جو دیکھے رشک آئے مجھ، کرے مت کوئی سجدہ اس دوارا تُج عاشقاں میں ہوتا جنگ و جدل سو سب دن ہے شرعِ احمدی تُج انصاف کر خدارا تُج خیال کی ہوس تھے ہے جیو ہمن سو زندہ او خیال کد نجاوے ہم سرتھے ٹک بہارا جب توں لکھیا قطبؔ شہ مہر محمدؐ اپ دل ہے شش جہت میں تجھ کو حیدر کہ توا دہارا

قلی قطب شاہ ریاست گولکنڈ ہ کے فرمانروا تھے آپ کا دور حکومت تقریباً تیس سال رہاہندوستان کے مشہور شہر حیدرآباد کی بنیاد قلی قطب شاہ نے ہی رکھی اور چار مینار کی تعمیر کروائی۔ قلی قطب شاہ بڑے ہی علم دوست ، عربی اور فارسی کے ماہر اور اردو کے پہلے صاحب دیوان شاعر تھے۔ آپ کے مجموعہ کلام میں غزلیات ، رباعیاں قصیدے اور مختلف قطعات وغیرہ شامل ہے۔قلی قطب شاہ کا کلام دکنی اردو ادب کو پیش کرتا ہے ان کے دور میں اردو فروغ پا …

Parveen Shakir Ghazal chand maire tarha

پروین شاکر کی ایک غزل
چاند میری طرح پگھلتا رہا نیند میں ساری رات چلتا رہا
جانے کس دکھ سے دل گرفتہ تھا مُنہ پہ بادل کی راکھ ملتارہا
میں تو پاؤں کے کانٹے چُنتی تھی اور وہ راستہ بدلتا رہا
رات گلیوں میں جب بھٹکتی تھی کوئی تو تھا جا ساتھ چلتا رہا
موسمی بیل تھی مَیں،سوکھ گئی وہ تناور درخت ،پھلتا رہا
سَرد رُت میں،مسافروں کے لیے پیڑ، بن کر الاؤ جلتا رہا
دل، مرے تن کا پھول سا بچہ پتھروں کے نگر میں پلتا رہا
نیند ہی نیند میں کھلونے لیے خواب ہی خواب میں بہلتا رہا

Kamal-e-zabt ko mai khud Poetry

کمالِ ضبط کو میں خود بھی تو آزماؤں گی میں اپنے ہاتھ سےاس کی دلہن سجاؤں گی
سپرد کر کے اسے چاندنی کے ہاتھوں میں میں اپنے گھر کے اندھیروں کو لوٹ آؤں گی
بدن کے کرب کو وہ بھی سمجھ نہ پائے گا میں دل میں روؤں گی، آنکھوں میں مسکراؤں گی
وہ کیا گیا رفاقت کے سارے لطف گئے میں کس سے روٹھ سکوں گی، کسے مناؤں گی
اب اُس کا فن تو کسی اور سے ہوا منسوب میں کس کی نظم اکیلے میں گُنگناؤں گی
وہ ایک رشتہ بے نام بھی نہیں لیکن میں اب بھی اس کے اشاروں پہ سر جھکاؤں گی
بچھا دیا تھا گلابوں کے ساتھ اپنا وجود وہ سو کے اٹھے تو خوابوں کی راکھ اٹھاؤں گی
سماعتوں میں اب جنگلوں کی سانسیں ہیں میں اب کبھی تری آواز سُن نہ پاؤں گی
جواز ڈھونڈ رہا تھا نئی محّبت کا وہ کہہ رہا تھا کہ میں اُس کو بھول جاؤں گی

Mai Tujhai Bholne Chahon bhi to Poetry

غزل
اطہر ناسک
میں تجھے بھولنا چاہوں بھی تو ناممکن ہے تو میری پہلی محبت ہے مرا محسن ہے
میں اسے صبح نہ جانوں جو ترے سنگ نہیں میں اسے شام نہ مانوں کہ جو ترے بن ہے
کیسا منظر ہے ترے ہجر کے پس منظر کا ریگِ صحرا ہے رواں اور ہوا ساکن ہے
تیری آنکھوں سے تری باتوں سے لگتا تو نہیں مرے احباب یہ کہتے ہیں کہ تو کم سن ہے
ابھی کچھ دیر میں ہو جائے گا آنگن جل تھل ابھی آغاز ہے بارش کا ابھی کِن مِن ہے
عین ممکن ہے کہ کل وقت فقط مرا ہو آج مٹھی میں یہ آیا ہوا پہلا دن ہے
آج کا دن تو بہت خیر سے گزرا ناسک کل کی کیوں فکر کروں کل کا خدا ضامن ہے

Go Zara Se Baat Par Barso Poetry

ایک شعر ضرب المثل بن کر ہمیشہ میرے کانوں سے ٹکراتا رہتا تھا 
گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے
لیکن اِتنا تو ہوا کچھ لوگ پہچانے گئے
آج سرفنگ کرتے ہوئے مجھے پوری غزل دستیاب ہوئی تو اس غزل کو بہترین انداز میں ڈیزائن بھی کیا اور سوچا آپ حضرات کے ساتھ شیئر کروں۔
تزئین شدہ شکل میں یہ غزل یہاں دیکھی جا سکتی ہے
گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے
خاطر ؔغزنوی
گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے لیکن اِتنا تو ہوا کچھ لوگ پہچانے گئے
میں اِسے شُہرت کہوں یا اپنی رُسوائی کہوں مُجھ سے پہلے اُس گلی میں میرے افسانے گئے
وحشتیں کُچھ اِس قدر اپنا مُقدّر ہوگئیں ہم جہاں پہنچے ہمارے ساتھ وِیرانے گئے
یُوں تو وہ میری رگِ جاں سے بھی تھے نزدِیک تر آنسُوؤں کی دھُند میں لیکِن نہ پہچانے گئے
اب بھی اُن یادوں کی خوشبو ذہن میں محفُوظ ہے بارہا ہم جِن سے گُلزاروں کو مہکانے گئے
کیا قیامت ہے کہ خاطرؔ  کُشتۂ شب ہم ہی تھے صُبح جب آئی تو مُجرِم ہم ہی گردانے گئے

Kafeel Aarz Ghazal (baat niklay)

کفیل آزر
بات نکلے گی تو پھر دُور تَلَک جائے گی لوگ بے وجہ اُداسی کا سبب پوچھیں گے یہ بھی پوچھیں گے کہ تُم اتنی پریشاں کیوں ہو؟ اُنگلیاں اُٹھیں گی سُوکھے ہوئے بالوں کی طرف! اِک نظر دیکھیں گے گُزرے ہوئے سالوں کی طرف! چُوڑیوں پر بھی کئی طنز کئے جائیں گے کانپتے ہاتھوں پہ بھی فقرے کسے جائیں گے لوگ ظالِم ہیں ہر اِک بات کا طعنہ دیں گے باتوں باتوں میں میرا ذِکر بھی لے آئیں گے اُن کی باتوں کا ذرا سا بھی اثر مت لینا ورنہ چہرے کہ تاثُّر سے سمجھ جائیں گے چاہے کچھ بھی ہو سوالات نہ کرنا اُن سے میرے بارے میں کوئی بات نہ کرنا اُن سے بات نکلے گی تو پھر دُور تَلَک جائے گی

Aitibaar Sajid Ghazal (taire rahmaton)

تیری رحمتوں کے دیار میں تیرے بادلوں کو پتا نہیں ابھی آگ سرد ہوئی نہیں ابھی اِک الاؤ جلا نہیں
میری بزمِ دِل تو اُجڑ چُکی، مِرا فرشِ جاں تو سِمٹ چُکا سبھی جا چُکے مِرے ہم نشِیں مگر ایک شخص گیا نہیں
در و بام سب نے سجا لیے، سبھی رَوشنی میں نہا لیے مِری اُنگلِیاں بھی جھُلس گئیں مگر اِک چراغ جلا نہیں
غمِ زِندگی!  تِری راہ میں، شبِ آرزُو! تِری چاہ میں جو اُجڑ گیا وہ بسا نہیں، جو بِچھڑ گیا وہ مِلا نہیں
جو دِل و نظر کا سُرُور تھا میرے پاس رہ کے بھی دُور تھا وہی ایک گُلاب اُمید کا میری شاخِ جاں پہ کھِلا نہیں
پسِ کارواں سرِ رہگُزر میں شِکستہ پا ہُوں تو اِس لیے کہ قدم تو سب سے مِلا لیے میرا دل کِسی سے مِلا نہیں
میرا ہمسفر جو عجِیب ہے تو عجِیب تر ہُوں مَیں آپ بھی مُجھے منزِلوں کی خبر نہیں، اُسے راستوں کا پتہ نہیں

Parveen Shakir Ghazal

کمالِ ضبط کو میں خود بھی تو آزماؤں گی پروین شاکر
کمالِ ضبط کو میں خود بھی تو آزماؤں گی میں اپنے ہاتھ سےاس کی دلہن سجاؤں گی
سپرد کر کے اسے چاندنی کے ہاتھوں میں میں اپنے گھر کے اندھیروں کو لوٹ آؤں گی
بدن کے کرب کو وہ بھی سمجھ نہ پائے گا میں دل میں روؤں گی، آنکھوں میں مسکراؤں گی
وہ کیا گیا رفاقت کے سارے لطف گئے میں کس سے روٹھ سکوں گی، کسے مناؤں گی
اب اُس کا فن تو کسی اور سے ہوا منسوب میں کس کی نظم اکیلے میں گُنگناؤں گی
وہ ایک رشتہ بے نام بھی نہیں لیکن میں اب بھی اس کے اشاروں پہ سر جھکاؤں گی
بچھا دیا تھا گلابوں کے ساتھ اپنا وجود وہ سو کے اٹھے تو خوابوں کی راکھ اٹھاؤں گی
سماعتوں میں اب جنگلوں کی سانسیں ہیں میں اب کبھی تری آواز سُن نہ پاؤں گی
جواز ڈھونڈ رہا تھا نئی محّبت کا وہ کہہ رہا تھا کہ میں اُس کو بھول جاؤں گی

Mai tujhai Bholna Chahon b to na mumkin hai

غزل
اطہر ناسک
میں تجھے بھولنا چاہوں بھی تو ناممکن ہے تو میری پہلی محبت ہے مرا محسن ہے
میں اسے صبح نہ جانوں جو ترے سنگ نہیں میں اسے شام نہ مانوں کہ جو ترے بن ہے
کیسا منظر ہے ترے ہجر کے پس منظر کا ریگِ صحرا ہے رواں اور ہوا ساکن ہے
تیری آنکھوں سے تری باتوں سے لگتا تو نہیں مرے احباب یہ کہتے ہیں کہ تو کم سن ہے
ابھی کچھ دیر میں ہو جائے گا آنگن جل تھل ابھی آغاز ہے بارش کا ابھی کِن مِن ہے
عین ممکن ہے کہ کل وقت فقط مرا ہو آج مٹھی میں یہ آیا ہوا پہلا دن ہے
آج کا دن تو بہت خیر سے گزرا ناسک کل کی کیوں فکر کروں کل کا خدا ضامن ہے

Gho zara see baat par barso k yaar atai gayai

ایک شعر ضرب المثل بن کر ہمیشہ میرے کانوں سے ٹکراتا رہتا تھا 
گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے
لیکن اِتنا تو ہوا کچھ لوگ پہچانے گئے
آج سرفنگ کرتے ہوئے مجھے پوری غزل دستیاب ہوئی تو اس غزل کو بہترین انداز میں ڈیزائن بھی کیا اور سوچا آپ حضرات کے ساتھ شیئر کروں۔
تزئین شدہ شکل میں یہ غزل یہاں دیکھی جا سکتی ہے
گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے
خاطر ؔغزنوی
گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے لیکن اِتنا تو ہوا کچھ لوگ پہچانے گئے
میں اِسے شُہرت کہوں یا اپنی رُسوائی کہوں مُجھ سے پہلے اُس گلی میں میرے افسانے گئے
وحشتیں کُچھ اِس قدر اپنا مُقدّر ہوگئیں ہم جہاں پہنچے ہمارے ساتھ وِیرانے گئے
یُوں تو وہ میری رگِ جاں سے بھی تھے نزدِیک تر آنسُوؤں کی دھُند میں لیکِن نہ پہچانے گئے
اب بھی اُن یادوں کی خوشبو ذہن میں محفُوظ ہے بارہا ہم جِن سے گُلزاروں کو مہکانے گئے
کیا قیامت ہے کہ خاطرؔ  کُشتۂ شب ہم ہی تھے صُبح جب آئی تو مُجرِم ہم ہی گردانے گئے

Kafeel Aarz Ghazal

کفیل آزر
بات نکلے گی تو پھر دُور تَلَک جائے گی لوگ بے وجہ اُداسی کا سبب پوچھیں گے یہ بھی پوچھیں گے کہ تُم اتنی پریشاں کیوں ہو؟ اُنگلیاں اُٹھیں گی سُوکھے ہوئے بالوں کی طرف! اِک نظر دیکھیں گے گُزرے ہوئے سالوں کی طرف! چُوڑیوں پر بھی کئی طنز کئے جائیں گے کانپتے ہاتھوں پہ بھی فقرے کسے جائیں گے لوگ ظالِم ہیں ہر اِک بات کا طعنہ دیں گے باتوں باتوں میں میرا ذِکر بھی لے آئیں گے اُن کی باتوں کا ذرا سا بھی اثر مت لینا ورنہ چہرے کہ تاثُّر سے سمجھ جائیں گے چاہے کچھ بھی ہو سوالات نہ کرنا اُن سے میرے بارے میں کوئی بات نہ کرنا اُن سے بات نکلے گی تو پھر دُور تَلَک جائے گی

Aaitibaar Sajid Ghazal

تیری رحمتوں کے دیار میں تیرے بادلوں کو پتا نہیں ابھی آگ سرد ہوئی نہیں ابھی اِک الاؤ جلا نہیں
میری بزمِ دِل تو اُجڑ چُکی، مِرا فرشِ جاں تو سِمٹ چُکا سبھی جا چُکے مِرے ہم نشِیں مگر ایک شخص گیا نہیں
در و بام سب نے سجا لیے، سبھی رَوشنی میں نہا لیے مِری اُنگلِیاں بھی جھُلس گئیں مگر اِک چراغ جلا نہیں
غمِ زِندگی!  تِری راہ میں، شبِ آرزُو! تِری چاہ میں جو اُجڑ گیا وہ بسا نہیں، جو بِچھڑ گیا وہ مِلا نہیں
جو دِل و نظر کا سُرُور تھا میرے پاس رہ کے بھی دُور تھا وہی ایک گُلاب اُمید کا میری شاخِ جاں پہ کھِلا نہیں
پسِ کارواں سرِ رہگُزر میں شِکستہ پا ہُوں تو اِس لیے کہ قدم تو سب سے مِلا لیے میرا دل کِسی سے مِلا نہیں
میرا ہمسفر جو عجِیب ہے تو عجِیب تر ہُوں مَیں آپ بھی مُجھے منزِلوں کی خبر نہیں، اُسے راستوں کا پتہ نہیں

Saghar Sadiuqi Ghazal

ساغر صدیقی کی ایک زبردست غزل

جب گلستاں میں بہاروں کے قدم آتے ہیں یاد بُھولے ہوئے یاروں کے کرم آتے ہیں
لوگ جس بزم میں آتے ہیں ستارے لے کر ہم اسی بزم میں بادیدئہ نم آتے ہیں
میں وہ اِک رندِ خرابات ہُوں میخانے میں میرے سجدے کے لیے ساغرِ جم آتے ہیں
اب مُلاقات میں وہ گرمی جذبات کہاں اب تو رکھنے وہ محبت کا بھرم آتے ہیں
قُربِ ساقی کی وضاحت تو بڑی مشکل ہے ایسے لمحے تھے جو تقدیر سے کم آتے ہیں
میں بھی جنت سے نکالا ہُوا اِک بُت ہی تو ہُوں ذوقِ تخلیق تجھے کیسے ستم آتے ہیں
چشم ساغرؔ ہے عبادت کے تصوّر میں سدا دل کے کعبے میں خیالوں کے صنم آتے ہیں

Allama Iqbal Ghazal (Dhond raha hai)

غزل علامہ اقبالؔ
ڈھونڈ رہا ہے فرنگ عیش جہاں کا دوام وائے تمنائے خام، وائے تمنائے خام!
پیر حرم نے کہا سن کے مری روئداد پختہ ہے تیری فغاں، اب نہ اسے دل میں تھام
تھا اَرِنی گو کلیم، میں اَرِنی گو نہیں اس کو تقاضا روا، مجھ پہ تقاضا حرام
گرچہ ہے افشائے راز، اہل نظر کی فغاں ہو نہیں سکتا کبھی شیوۂ رندانہ عام


حلقۂ صوفی میں ذکر، بے نم و بے سوز و ساز میں بھی رہا تشنہ کام، تو بھی رہا تشنہ کام
عشق تری انتہا، عشق مری انتہا تو بھی ابھی ناتمام، میں بھی ابھی ناتمام
آہ کہ کھویا گیا تجھ سے فقیری کا راز ورنہ ہے مال فقیر سلطنت روم و شام

Saimaab Akbar Aabadi Ghazal

غزل
سیماب اکبرآبادی
رہیں گے چل کے کہیں اوراگر یہاں نہ رہے بَلا سے اپنی  جو آباد گُلِسْتان نہ رہے
ہم ایک لمحہ بھی خوش زیرِ آسماں نہ رہے غنیمت اِس کوسَمَجْھیے کہ جاوِداں نہ رہے
ہمیں تو خود چَمن آرائی کا سلیقہ ہے جو ہم رہے توگُلِسْتاں میں باغباں نہ رہے
شباب نام ہے دل کی شگفتہ کاری کا وہ کیا جوان رہے جس کا دل جواں نہ رہے
حرم میں، دَیروکلیسا میں، خانقاہوں میں ہمارے عشق کے چرچے کہاں کہاں نہ رہے
کبھی کبھی، رہی وابستگی قفس سے بھی رہے چمن میں تو پابندِ آشیاں نہ رہے
فضائے گل ہے نظرکش و مَن ہے دامن کش کہاں رہے تِرا آوارہ سر، کہاں نہ رہے
بہار جن کے تبسّم میں مُسکراتی تھی وہ گُلِسْتاں  وہ جوانانِ گُلِسْتاں نہ رہے
خدا کے جاننے والے تو خیر کچھ تھے بھی خدا کے ماننے والے بھی اب یہاں نہ رہے
ہمیں قفس سے کریں یاد پھر چمن والے جب اور کوئی ہوا خواہِ آشیاں نہ رہے
کِیا بھی سجدہ تو دل سے کِیا نظر سے کِیا خدا کا شُکر کہ ہم بارِ آستاں نہ رہے
ہےعصرِنَو سے یہ اِک شرط انقلاب کے بعد ہم اب رہیں جو زمیں پر تو آسماں نہ رہے
برائے راست تعلّق تھا جن کا منزل سے وہ راستے نہ رہے اب وہ کارواں نہ رہے
ہَمِیں خرابِ ضعیفی نہیں ہوئے سیماب ہمارے وقت کے اکثر ح…