Amjid Islam Poetry Ghazal

امجدؔ اسلام امجد کی ایک پیاری سی غزل


یہ رُکے رُکے سے آنسو، یہ دبی دبی سی آہیں
یونہی کب تلک خدایا،  غم زندگی نباہیں

کہیں ظلمتوں میں گھِر کر، ہے تلاشِ دست رہبر
کہیں جگمگا اُٹھی ہیں مرے نقشِ پا سے راہیں

ترے خانماں خرابوں کا چمن کوئی نہ صحرا
یہ جہاں بھی بیٹھ جائیں وہیں ان کی بارگاہیں

کبھی جادۂ طلب سے جو پھرا ہوں دل شکستہ
تری آرزو نے ہنس کر  وہیں ڈال دی ہیں بانہیں

مرے عہد میں نہیں ہے،  یہ نشانِ سر بلندی
یہ رنگے ہوئے عمامے  یہ جھکی جھکی کُلاہیں

Comments

Popular posts from this blog

Tum Kon Piya Dialogues & Drama Pics

Tum Kon Piya Episode Dialogues & Drama Pics