Gho zara see baat par barso k yaar atai gayai

ایک شعر ضرب المثل بن کر ہمیشہ میرے کانوں سے ٹکراتا رہتا تھا 

گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے

لیکن اِتنا تو ہوا کچھ لوگ پہچانے گئے

آج سرفنگ کرتے ہوئے مجھے پوری غزل دستیاب ہوئی تو اس غزل کو بہترین انداز میں ڈیزائن بھی کیا اور سوچا آپ حضرات کے ساتھ شیئر کروں۔

تزئین شدہ شکل میں یہ غزل یہاں دیکھی جا سکتی ہے

گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے

خاطر ؔغزنوی

گو ذرا سی بات پر برسوں کے یارانے گئے
لیکن اِتنا تو ہوا کچھ لوگ پہچانے گئے

میں اِسے شُہرت کہوں یا اپنی رُسوائی کہوں
مُجھ سے پہلے اُس گلی میں میرے افسانے گئے

وحشتیں کُچھ اِس قدر اپنا مُقدّر ہوگئیں
ہم جہاں پہنچے ہمارے ساتھ وِیرانے گئے

یُوں تو وہ میری رگِ جاں سے بھی تھے نزدِیک تر
آنسُوؤں کی دھُند میں لیکِن نہ پہچانے گئے

اب بھی اُن یادوں کی خوشبو ذہن میں محفُوظ ہے
بارہا ہم جِن سے گُلزاروں کو مہکانے گئے

کیا قیامت ہے کہ خاطرؔ  کُشتۂ شب ہم ہی تھے
صُبح جب آئی تو مُجرِم ہم ہی گردانے گئے

Post a Comment