Razia Kazmi Sahiba Ghazals

رضیہ کاظمی صاحبہ کی تین غزلیں


ان کو عادت ہے آزمانے کی

اور  مجھ  کو   فریب  کھانے  کی

جایئں کیوں در پہ بار بار اُن کے

بات    یہ  ہے       اَنا    گنوانے    کی

اپنے  معمول  چھوڑ  کر   ان  کو

صرف دُھن ہے مجھے ستانے کی

ان کے  آنے  سے بڑھ گئ رونق

جاگی  قسمت   غریب خانے  کی

ہے   خبر  گرم    آ  گیا   صیّاد

اب   نہیں  خیر  آشیانے   کی

شاعری  دل  کو  جو چُھوۓ  رضیہ

مستحق    ہے   وہ   داد   پانے    کی

==================

وہ نہ کردہ گناہوں کی سزا  دیتے ہیں

ہم کہ اقرار میں سر اپنا  جھکا دیتے ہیں

مشتعل  ہونا   یوں  ہی  فطرتِ  انسانی  ہے

پھر بھی ہم کس لیے شعلوں کو ہوا دیتے ہیں

گہہ لگا لیتے  ہیں آنکھوں سے وہ سرمہ کی طرح

مشتعل  آنسو  کبھی  نظروں سے گرا  دیتے ہیں

اک  تکلف  کی   جو   دیوار  کھڑی کر   لی  ہے

اب سمجھداری سے خود  مِل  کے گرا دیتے ہیں

دِ ن بدن رشتوں میں پڑتی رہیں یوں ہی گا نٹھیں

کیوں کہ ہم ہاتھ میں غیروں کے سِرا دیتے ہیں

یہ قدم وہ ہیں ٹھہر جایئں جہاں بھی تھک کر

ایک  منزل    نیئ    اُس  جا   کو  بنا   دیتے  ہیں

یا د آجاتے ہیں  ماضی  کے  سنہرے  لمحے

اور  وہ  رضیہ  ہمیں  دیوانہ  بنا  دیتے  ہیں



ہر چلن ہر نیے  معیار سے ڈر لگتا ہے

آج کل گرمیئ بازار سے ڈر لگتا ہے

وہ قیامت ابھی آجاۓ جو کل آنی ہے

سر پہ لٹکی ہوئ  تلوار سے ڈر لگتا  ہے

اِ ن مکھوٹوں میں ہوں گے وہ ہی پُرانے چہرے

ہر   بدلتی   ہوئ   سرکار    سے    ڈر   لگتا   ہے

پا بہ  زنجیر  کیا   گھر   کے  جھمیلوں  نے   یوں

اب تو خود اپنے ہی گھر بار سے  ڈر لگتا   ہے

ایک سایہ بھی جو قسمت سے  ملا  یہ مجھ کو

ڈھے نہ جاے کہیں دیوار سے ڈر لگتا ہے

مشتبہ ٹھہرے  سبٖھی رضیہ  زمانے  والے



آستینوں میں  چھپے  مار  سے  ڈر لگتا ہے

Comments

Popular posts from this blog

Tum Kon Piya Dialogues & Drama Pics

Tum Kon Piya Episode Dialogues & Drama Pics