تاریخ کا شیوہ ہے صدیوں کو نگل جانا


غزل




از ڈاکٹر جاوید جمیل



چپکے سے قریب آنا، پھر دور نکل جانا

ہر پل کا مقدّر ہے ماضی میں بدل جانا



کر کر  کے تری باتیں، پڑھ پڑھ کے ترا چہرہ

ہر صنف سخن سیکھی، ہر رنگ غزل جانا



اک فرض ہے ہستی پر ہر پل کی پذیرائی

تاریخ کا شیوہ ہے صدیوں کو نگل جانا



پڑتی ہیں پہاڑوں پرسورج کی شعاعیں جب

مشکل کہاں رہتا ہے پھر برف پگھل جانا



کردار ادا کرنا ہر شخص کو پڑتا ہے

آساں نہیں قوموں کی تقدیر بدل جانا



جاوید ضروری ہے دنیا میں اندھیرا بھی

ہے مصلحت یزداں یہ شام کا ڈھل جانا

--

Comments

Popular posts from this blog

Tum Kon Piya Dialogues & Drama Pics

Tum Kon Piya Episode Dialogues & Drama Pics